Date: 15-12-17  Time: 09:15 AM

Show Posts

This section allows you to view all posts made by this member. Note that you can only see posts made in areas you currently have access to.


Topics - Doctor

Pages: [1] 2
1
Medical News & General Information / KPK Measles Vaccine Reactions
« on: May 25, 2014, 01:01:53 AM »
At least 30 children fell ill in Swat after receiving vaccinations for measles on Saturday, Express News reported.

A team of health officials had gone to their school, MR Model School in Mingora, where they were given injections of the vaccines. After which, the children fell ill and were taken to Saidu Sharif Hospital for medical treatment.

According to sources at the hospital, the children are out of danger.

The reason of the adverse reaction to the vaccinations is not known as yet.

On May 21, six children had fallen unconscious after being administered measles vaccines in Kohat district. A team of health officials went to a private school in Jangal Khel to vaccinate children against measles after which the students fell unconscious and were rushed to the Liaqat Memorial Hospital.

Two days earlier, at least 23 students of Government Girls Primary School in Dalan union council of Thal, Hangu had fallen unconscious after they were administered anti-measles injections.

The commonly known side-effects of measles vaccines range from the common ones which are fever, rash to the very rare ones such as mild seizures and deafness.

http://tribune.com.pk/story/712501/30-children-fall-sick-upon-receiving-measles-vaccinations/

2
DAWN 29/3/2014

ISLAMABAD: Despite instructions from Prime Minister Nawaz Sharif, pharmaceutical companies in the country have increased the prices of 179 life-saving drugs on their own. The average increase in the prices is around 30 per cent but there are drugs whose prices have gone up manifold.

On the other hand, the Drug Regulatory Authority of Pakistan (DRAP) claimed that the prices of only those medicines had been increased whose manufacturers had obtained a stay order from Sindh High Court against the withdrawal of a notification to increase the prices in November, it has been learnt.

On November 28, 2013, DRAP issued a notification increasing the prices of medicines (except life-saving drugs) by 15 per cent. The very next day, however, Prime Minister Nawaz Sharif took notice of the matter and on his direction DRAP withdrew the notification on November 29. However, 16 companies approached the Sindh High Court and obtained a stay order against the withdrawal of the notification.

An officer of the Ministry of National Health Services requesting not to be identified told Dawn that the companies had increased the prices by manifold. However, he added, DRAP failed to ensure the sale of medicines on the officially-fixed rates.

“Although according to the Ministry the prices were not increased since 2001 (except for a few cases in which permission was granted by the government), the fact is that the prices have gone up by 30 per cent in the last five months,” he said.

“As per a market survey, the price of a packet of memomax 1.5mg capsule has been increased from Rs142 to Rs2205, serenace ampoule 5mg/ml, which was available for Rs23, is now selling at Rs191,” he said.

Similarly, the price of omixim 200mg/5ml suspension has been increased from Rs145 to Rs242, vapto 10mg tablet (packet) from Rs128 to Rs200, zeemox 1gm from Rs120 to Rs174, and the price of amoxil capsule 250mg has been jacked up from Rs310 to Rs356, he said.

On Friday, the Young Pharmacists Association (YPA) also sent a letter to the prime minister stating that according to their market survey the total impact of the increase in the prices of registered allopathic medicines was around 30 per cent.

The letter added that the Ministry of National Health Services had claimed that there was no price increase.

It is also noted that no case of price increase was made after November 27, 2013, when the notification was released by DRAP.

“DRAP and the Ministry of National Health Services only deceived the court, the prime minister and the poor patients by announcing the withdrawal of the price increase. Till to date, rules for DRAP have not been formulated. The price increase notification could not be issued without rules,” added the letter.

Secretary coordination YPA Dr Nabeela Latif said a list of medicines with their old and new prices had also been sent to the prime minister. She wondered how DRAP was unaware of the price increase.

“DRAP cannot give retrospective price increase of 1.5 per cent annually from 2002 to 2013. This is against the settled principles of law and superior court rulings. Moreover, medicine prices are already very high in Pakistan as compared to India, China and Bangladesh,” she said.

“Every Pakistani has the fundamental right to access to medicines which is being denied to them. The multinational companies are charging very high prices of medicines in Pakistan.”

She said through the letter they had requested the prime minister to nullify the entire proceedings of DRAP during the last two years and take action against the officials concerned.

When contacted, Director Pricing DRAP Amanullah said after the withdrawal of the notification about the prices some companies approached the Sindh High Court and obtained a stay order due to which it was not possible to force them to reduce the prices.

“DRAP has already raised the issue of 16 companies in the Supreme Court and the next hearing of the matter will be held in April. We

have been trying to ensure that not a single company increased the prices,” he said.

http://www.dawn.com/news/1096281

3
Psychological and Social Tips

   
  • Control your anger as it is more often likely to harm you than do any good.
  • Remain sincere and helpful to people. This rewards you again and again.
  • Do not keep on thinking about any stressful event. Try to divert your attention towards some healthy activity.
  • Identify and celebrate your successes.
   
   

4
Medical Education & Research / Progeria
« on: October 23, 2013, 10:14:45 AM »
Sam Berns has progeria, a rare fatal genetic disorder that causes children to age far faster than the rest of us. It’s so rare that fewer than 250 children in the world have it.

But when Sam was born very little was known about the disease and his parents, both doctors, weren’t willing to accept that Sam was rapidly aging without proper proof.

“Maybe it looks a little like aging,” says Sam’s mother Dr. Leslie Gordon, “but you're not going to convince me that it has anything to do with aging until the science tells us that it does.”

So when Sam was almost three years old Dr. Gordon started the Progeria Research Foundation to study the disease to find out what information was missing about this mysterious disorder.

It turned that the question wasn’t so much what was missing, but what was there to work with. There were no cell tissue banks for researchers to study, no funding, and no organizations for families and physicians to learn about progeria.

She helped form a consortium of doctors and researchers who found that progeria is caused by an abnormal protein called progerin. And what may be the most shocking part of the discovery is that progerin is in everybody, not just in those 250 people with the disorder.

The difference is that those without progeria have low levels of progerin, while Sam is teaming with it.

The high levels of progerin causes Sam’s body to age much faster than those without it and it’s Dr. Gordon’s mission to slow down that process as much as possible.

5
ذیابیطس کے مریض کے لئے اہم معلومات
ہماری یہ کوشش ہے کہ آپ کو اس مختصر مضمون میں ذیابیطس کے بارے میں چند بہت بنیادی مگر اہم باتیں بتائی جائیں۔ اس مضمون کا مقصد یہ ہرگز نہیں کہ آپ اس کو ڈاکٹر کی جگہ دے دیں اور آپ اپنا علاج خود کرنا شروع کردیں۔ آپ کو اگر ذیابیطس کا مرض ہے تو ایک مستند ڈاکٹر سے اپنا متواتر علاج کرواتے رہیئے ۔

اعداد و شمار

ذیابیطس کا مرض پاکستان میں بہت عام ہوتا جا رہا ہے۔ اندازاً پاکستان میں 10 فیصد لوگ اس کا شکار ہیں۔ یہ ایک نہایت پریشان کن بات ہے۔ اگر پاکستان کی آبادی اب 18 کروڑ ہے تو اس میں غالباً پونے دو کروڑ سے زیادہ لوگوں کو ذیابیطس کا مرض ہوگا۔

ذیابیطس سے متعلق جسم کی ساخت اور افعال۔

کسی بھی مرض کو سمجھنے کے لئیے ہمیں اس مرض سےمتعلقہ جسم کی ساخت اور اس کے افعال کو سمجھنے کی ضرورت ہوتی ہے۔ ذیابیطس چونکہ خوراک اور اس کے اجزاء سے متعلق مرض ہے لہذا ہمیں خوراک، نظام انہضام اور جسم کے خوراک کے اجزاء کواستعمال کرنے کے طریقے کو سمجھنا ہوگا۔

 
   نظام انہضام

جب ہم کھانا کھاتے ہیں تو اس کا مقصد خوراک کو ہضم کرکے اس سے توانائی حاصل کرنا ہوتا ہے۔ ہضم کرنے کا کیا مطلب ہے؟ اس کا مطلب ہےکھانے کو اتنے
چھوٹے ٹکڑوں میں پیس دینا اور کیمیائی طریقوں سے اتنے چھوٹے اجزاء میں تقسیم کردینا کہ وہ خون میں جذب ہو پائے۔خوراک کے تین  بڑے اجزاء ہوتے ہیں۔ کاربوہایڈررٹ :شکریات ، پروٹین: لحمیات، اورفیٹ :چکنائیاں۔ کاربوہایڈررٹ میں چینی، آٹا، نشاستہ ، پھل اور چاول وغیرہ آتے ہیں۔ تقریبا یًہ سب کاربوہایڈررٹ جب ہضم ہوتے ہیں تو جسم انہیں توڑ پھوڑ کر گلوکوز بنا دیتا ہے۔ گلوکوزایک طرح کی چینی ہوتی ہے۔ یہی وہ چینی ہے جو ذیابیطس میں خون میں بڑھ جاتی ہے۔ اور اسی چینی کو ذیابیطس کے مریض کے خون میں ناپا جاتاہے اور اسی چینی یعنی گلوکوز کو لوگ شوگر کہتے ہیں۔ کھانا منہ میں ہضم ہونا شروع ہوجاتا ہے۔ دانت کھانے کو پیستے ہیں اورتھوک کھانے کو مائع حالت میں لے آتا ہے ۔ منہ سے کھانا خوراک کی نالی کے راستے معدے میں پہنچتا ہے۔ معدہ خوراک کو بلو بلو کر اور پیستا ہے اور معدے کی تیزابی رطوبتیں کھانے اور اس میں شامل گوشت کو گلا کر اسے بالکل محلول بنا دیتی ہیں۔ معدے سے کھانا آنتوں میں پہنچتا ہے۔ جگر اپنی رطوبت، جسے صفراکہا جاتا ہے ،ایک نالی کے ذریعے آنتوں میں خارج کرتا ہے۔ صفرا کھانے کی چکنائی کو توڑ کر اسے پتلا کردیتا ہے۔پھر لبلبہ، جو کہ ایک غدود ہوتا ہے،اپنا رس آنتوں میں ڈالتا ہے جس سے کھانا کیمیائی عمل کے نتیجے میں بہت چھوٹے اجزاء میں تقسیم ہو جاتا ہے۔ لبلبہ پیٹ میں آنتوں کے پیچھے موجود ہوتا ہے۔ آنتوں کی دیواروں میں خون کی نالیاں ہوتی ہیں جن میں چھوٹے چھوٹے سوراخ ہوتے ہیں۔ اُن سوراخوں میں سے پسا اور تقسیم ہوا کھانا چھن چھن کر خون کی نالیوں میں دوڑتے ہوئے خون میں جذب ہو جاتا ہے۔ یوں ہضم کرنے کا کام مکمل ہوتا ہے۔ شکریات یا کاربوہایڈررٹ اگر تو چھوٹی اور سادہ شکل میں ہوں تو انہیں مزید چھوٹا بنا کر ہضم کرنا بہت آسان ہوتا ہے۔ل ہذا یہ فوراً ہضم ہوکر خون میں شامل ہوجاتے ہیں اور خون کی شوگر تیزی سے بڑھا دیتے ہیں۔ ایسے سادہ کاربوہایڈررٹ میں چینی، میدہ ، آلواورچاول غیرہ شامل ہیں۔ وہ شہد جو کہ جعلی طریقے سے ،یعنی مکھیوں کو چینی کا شیرہ پلا کر ،بنوایا جاتا ہے کا گلائیسمک انڈیکس بہت زیادہ ہوتا ہے۔ خالص شہد کا گلائیسیمک انڈیکس ۵۸ ہوتا ہے۔ یہ بھی کچھ زیادہ ہے مگر پھر بھی قابلِ قبول ہے۔ ایسے کھانوں کو زیادہ گلائیسیمک والی خوراک کہا جاتا ہے۔ یہ خوراک شوگر میں کھانی نقصان دہ ہے۔گلوکوز چونکہ سب سے چھوٹا اور سادہ کاربوہائڈرٹ ہے لہذا یہ کھائے جانے کے بعد فورا ہضم ہو کر خون میں شامل ہوجاتا ہے۔ اس کا گلا ئیسیمک انڈیکس ۱۰۰ ہے۔ کچھ اور کاربوہائڈریٹ بڑےاور پیچیدہ شکل میں ہوتے ہیں۔ جسم کو انہیں توڑ کر گلوکوز میں تبدیل کرنے میں وقت لگتا ہے لہذا یہ دیر سے ہضم ہوتے ہیں اور خون میں شوگر ایک دم سے نہیں بڑھاتے ہیں۔ اس سے جسم کو وقت مل جاتا ہے اور وہ اپنے آپ کو زیادہ شوگر کو سنبھالنے کے لئے تیار کر لیتا ہے۔ اسی لئے ایسے کاروہہائڈرٹ شوگر کے مرض میں کھانے مفید ہوتے ہیں۔ان میں بغیر چھنا ہو ا گندم کاآٹا، جو، بیسن ، پھل، سبزیاں وغیرہ آتے ہیں۔ انہیں کم گلائیسیمک انڈیکس والی خوراک کہا جاتا ہے ایسے کھانوں کا گلائیسیمک انڈیکس  88 سے کم ہوتا ہے۔ جب کھانا خون میں شامل ہوجاتا ہے تو خون اسے کر لبلبے کی طرف جاتا ہے۔ گلوکوز کی ہر لمحے پیمائیش کرتا رہتاہےاور خون میں جتنا گلوکوز یا شوگر ہو اس کے مطابق ایک ہارمون جسے انسولین کہتے ہیں خون میں نکالتا ہے۔جب کھانے کے بعد گلوکوز سے لبریز خون لبلبے میں آتا ہے تو لبلبہ زیادہ انسولین خون میں ڈال دیتا ہے۔ ہارمون جسم کو ہدایات دینے والے مادے ہوتے ہیں۔ جسم میں کئی طرح کے ہارمون ہوتے ہیں۔ مثلا کوئی تو ایسا کہ اس کے زیرِ اثر بچوں کا قد بڑھتا ہے۔ ہارمون جسم کو کہتا ہے کہ قد بڑھاو اسی طرح انسولین بھی ایک ہارمون ہے جس کا کا کام ہے جسم کو ہدایت دینا کہ کہ کفایت شعاری کرو اور کھانے کے اجزا ٫ کو سنبھا ل کے رکھو۔ انسولین کی ہدایات کی وجہ سے جسم خوراک سے حاصل ہونے والے گلوکوز، جسےاب ہم خون کی شوگر کہیں گے، کو جسم کے خلیات میں ڈال دیتا ہے، ن اصرف شوگرکو بلکہ خورا ک سے حاصل ہونے والی پروٹین اور چکنائی کو بھی ۔ جب خون ،خوراک اور انسولین کو کر جگر میں پہنچتا ہے تو جگر انسولین کی ہدایت پر عمل کرتے ہوئے کچھ شوگرکو اپنے اندر محفوظ کرلیتا ہے ۔ جب جسم خون میں باقی بچی ہوئی شوگرکو جلا کر اس سے توانائی حاصل کرلیتا ہے تو پھر خون میں شوگرکی مقدار کم ہوجاتی ہے۔ لبلبہ ،جو ہر وقت خون میں گلوکوز یا شوگر کو ناپتا رہتا ہے، جب یہ دیکھتا ہے کہ اب خون کی شوگر کم ہو چکی انسولین بنانا بھی کم کردیتا ہے۔ جب خون میں شوگر بہت کم ہوجاتی تو لبلبہ ایک اور ہارمون خون میں نکالتا ہے جسے گلوکاگون کہتے ہیں۔ گلوکاگون جگر میں جاکر اسے ہدایت دیتا ہے کہ محفوظ کی ہوئی شوگرکو واپس خون میں نکالو ۔ لہذ اجگر ایسا کرتا ہے اور خون میں شوگرکی سطح گرنے نہیں پاتی۔ ذیابیطس ،جسے اب پاکستان میں زیادہ تر لوگ شوگر کہتے ہیں، ایسی بیماری ہے جس میں یا تولبلبہ کام کرنا بند کردیتا ہے لہذاجسم میں انسولین کی کمی ہوجاتی ہے اور یا پھر انسولین کی کمی تو نہیں ہوتی لبلبہ بےچارہ کام بھی پورا کررہا ہوتا ہےمگر جسم انسولین کی ہدایت پر عمل کرنا کم کردیتا ہے۔ لہذا انسولین جو کام کروانا چاہتی ہے وہ کام جسم صحیح طور پر نہیں کر کےنہیں دیتا۔ چنانچہ جب انسولین کہتی ہے کہ شو گرکو خلیوں میں ڈالو یا اسے جگر میں محفوظ کرو تو جسم اس کی بات نہیں مانتا۔ اگر شوگر خلیوں میں نہیں جائے تو تو پھر خون میں رہے تو۔ لہذا خون میں اس کی مقدار زیادہ ہو جائے تو۔ جسے عرفِ عام میں ہائی شوگر کہتے ہیں۔لیکن اگر آپ نے اوپر غو رکیا ہو تو آپ کو معلوم ہوگا کہ انسولین ناصرف شوگر بلکہ پروٹین جس سے جسم کے رگ پٹھےبنتے ہیں ،اور چکنائی، جوجسم میں چربی کی شکل میں جمع ہوتی ہے، کو بھی محفوظ کرواتی ہے۔ لہذا اگر انسولین کی کمی ہو اور شوگر کے ساتھ ساتھ پروٹین اور چکنائی بھی صحیح طور پرمحفوظ نہیں ہو پائیں توانسان دبلا ہوجائے گا اور اس کا وزن کم ہوجائے گا۔ لیکن پروٹین اورچکنائی پربُرا اثر تب پڑتا ہے جب انسولین بہت کم مقدار میں لبلبے سےنکلے۔ اس صورت میں جب کہ انسولین پوری مقدار میں نکل ر ہو مگرجسم انسولین کی بات مان رہا ہو تو ا سِ کا زیادہ اثر شوگرپرتو پڑتا ہے مگر پروٹین اور چکنائی پر نہیں۔ لہذا ایسے مرضوںں کا وزن کم نہیں ہوتا۔

مرضیات


مرضیات  کا مطلب ہے بیماری کو جاننا۔ سب سے پہلے تو یہ سوال پیدا ہوتا ہے کہ شوگر ہے کیا چیز اور جسم میں کیا ہوتا ہے جب شوگر لاحق ہو جاتی ہے۔
شوگر ہے کیا؟

جیسا کہ پہلے بتایا گیا ہےکہ شوگر کا مطلب ہےانسولین کی کمی یا جسم کا ا سکی ہدایات کو نہ ماننا۔ اگر انسولین کی کمی ہو تو اسے ٹائپ ون ذیابیطس یا شوگر کی پہلی قسم کہا جاتا ہے۔ اگر انسولین کی کمی نہ ہو بلکہ جسم اس کی ہدایات پر عمل نہیں کر رہا ہو تو اسے ٹائپ ٹو ذیابیطس یا شوگرکی دوسری قسم کہا جاتا ہے۔ یہ دونوں قسمیں بالکل الگ الگ علامات اور علاج رکھتی ہیں لہذا یہ سمجھنا بہت ضروری ہوتا ہے کہ مریض کو کس قسم کی ذیابیطس ہے۔ذیابیطس کی پہلی قسم یعنی انسولین کی کمی والی شوگرمیں لبلبہ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے اور یہ بہت کم لوگوں کو ہوتی ہے۔ عام طور پر بچے یا پھر لڑکپن کے زمانے میں لوگ اس کا شکار ہوتے ہیں۔ ان میں لبلبہ انسولین نہیں بناتا۔ اس کی وجہ یہ ہوتی ہے کہ ہمارا مدافعتی نظام ،جو کہ جراثیموں اور بخار وغیرہ سے لڑنے کے لئے ہوتا ہے، لبلبے کو دشمن سمجھ کر اس پر حملہ کر دیتا ہے اور اسے تباہ کر دیتا ہے۔ ہم نہیں جانتے کہ مدافعتی نظام کیوں اپنے جسم کو دشمن سمجھنے کی غلط فہمی کا شکار ہوجاتا ہے۔ یہ ذیابیطس کی بہت شدید قسم ہے۔ ایسے بچے یا نوجوان جنہیں یہ ذیابیطس ہوبہت کمزور ہوتے ہیں اور اگر ان کا علاج بہت جلد شروع نہ کیا جائے تو پھروہ زندہ نہیں رہ سکتے۔ ذیابیطس کی دوسری قسم یعنی جسم کا انسولین کی ہدایات کا نہ ماننا۔ یہ سب سے عام قسم ہے۔ یہی وہ ذیابیطس ہےجسے عرف عام میں شوگر کہا جاتا ہے۔ یہ اتنی عام ہے کہ پاکستان میں ہر دس لوگوں میں سے ایک کو یہ ہوتی ہے۔ اس ذیابیطس میں لبلبہ زیادہ سے زیادہ انسولین نکالتا ہے۔ مگر جسم اپنا پورا زور لگاتا ہے کہ جسم اس کا کہنا نہ مانے۔ لہذا انسولین کا پوراکہنا نہیں مانتا ۔ لہذا خون میں شوگرکی مقدار زیادہ رہتی ہے۔  پھربہت سالوں کے بعد ایک وقت ایسا آتا  ہےجب
اضافی کام کرنے کے  سبب لبلبہ اپنا نقصان کرلیتا ہے اور کام کرنا بندکردیتا ہے۔ لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ جسم کیوں انسولین کی بات نہیں مانتا۔ اس کی وجہ عام طور پر موٹاپا ہوتا ہے۔موٹے لوگوں کا جسم کئی چیزوں کے خلاف بغاوت کردیتا ہے۔ مثلا بلڈ پریشر یعنی خون کے دباو رکھنے والا نظام کا کہنا نہیں مانتا لہذا بلڈ پریشر بڑھ جاتا ہے ، ایک نارمل جسم چربی کوجگرمیں ڈالتا ہے مگر پھر اسے جگر سےنکال بھی دیتا ہے مگر موٹا جسم اس بات کو بھی نہیں مانتا اورچربی کو جگر میں جمع کرتا ر ہتاہے لہذا جگر چربی کی زیادتی کی وجہ سے خراب ہونا شروع ہو جاتا ہے جسے نان الکحلک سٹیٹو ہیپاٹائیٹس کہا جاتا ہے ۔موٹی خواتین  کا جسم بیضہ دانیوں کو ہر وقت کچھ اضافی کاموں میں لگائے رکھتا ہے جس کے نتیجے میں بیضہ دانیوں میں بلبلے سے بن جاتے ہیں اور وہ ایسے ہارمون نکالتی ہیں کہ ا ن کی وجہ سے عورتوں کے چہرے پر اضافی بال اگ آتے ہیں اور کبھی کبھی انکو ماں بننے میں دشواری بھی پیش آتی ہے۔ اس کیفیت کو پولی سسٹک اووریزکہا جاتا ہے اور یہ بھی بہت عام مرض ہے۔ اسی وجہ سے دوسری قسم کی ذیابیطس کے مریض عام طور پر موٹے ہو تےہیں اور ان کو بلڈ پریشر بھی ہوتا ہے۔ پھر اکثرموٹے لوگوں کے جگر میں چربی بھی اکٹھی ہوئی ہوتی ہے جس کی وجہ سے بعض اوقات جگر کا مرض بھی ہوا ہوتا ہے اوراکثراُن کا کولیسٹرول بھی زیادہ ہوا ہوتا ہے کولیسٹرول ایک طرح کی چکنائی ہوتی ہے۔اور کچھ لڑکیوں کو پولی سسٹک اووریزکے ساتھ ذیابیطس بھی ہوئی ہوتی ہے۔ مگر عام طور ایسی لڑکیوں کی یہ ذیابیطس ہلکی سی ہوتی ہے۔ اب یہ سمجھنا دشوار نہیں کہ اگر دوسری قسم کی شوگر کے مریض جو کہ پاکستان میں کروڑوں میں ہیں اپنا وزن کم کرلیں تو ا ن کی شوگر کو بہت حد تک قابومیں کیا جاسکتا ہے۔ موٹاپے کے ساتھ یہ تمام امراض اگر ہوں تو اس کو میٹابوہلک یا ایکس سنڈروم کہا جاتا ہے۔
اگر ذیابیطس ہوئی ہو تو پتا کیسے لگتا ہے؟

بچوں یا نوجوانوں میں تو یہ بہت آسان ہوتا ہے۔ ان میں ذیابیطس کی پہلی قسم ہوتی ہے جس میں ان کو پیشاب باربار آتا ہے، پیاس بہت لگتی ہے اور وزن تیزی سے گرتا ہے۔ بڑی عمر کے لوگوں میں جنہیں دوسری قسم کی ذیابیطس ہوتی ہے اس کی کئی سال تک کوئی علات  نہیں ہوتی۔ مگرجب اُن میں ذیابیطس کی پیچیدگیاں پیدا ہوجائیں تو ان پیچیدگیوں کی علامات ظاہر ہوتی ہیں جن کی وجہ سے شوگر کا پتا چلتا ہے۔ لہذا ہر 35 سال سے زائد عمر کے انسان کو سال میں دو دفعہ خالی پیٹ خون کی شوگر کا ٹیسٹ کروانا چاہئے تاکہ اگر چھپی ہوئی شوگر ہو تو اس کا علاج شروع ہوسکے اور اس کی پیچیدگیوں سے بچا جائے۔

ذیابیطس کی تشخیص

اس کے لئے خون میں شوگر یعنی گلوکوز کوناپا جاتا ہے۔انسان کو آٹھ گھنٹے خالی پیٹ رہ کر یہ ٹیسٹ کروانا چاہئے۔ اگرخالی پیٹ خون میں شوگر126 ملی گرام فی ڈیسی لیٹر ہو یا کھانا کھانے کے دو گھنٹوں بعد یا دن میں کبھی بھی 200 سے زیادہ ہو تو ذیابیطس کی تشخیص کی جاسکتی ہے۔ یاد رہے کہ نارمل خالی پیٹ انسان میں خون میں شوگر 100سے نیچے ہوتی ہے۔ ایک اور بہت ا چھا ٹیسٹ ہوتا ہے ہیموگلوبین ایچ ون سی۔ یہ تقریبا تین ماہ تک خون میں اوسطاً رہنے والی شوگر کی مقدار کا پتا دیتا ہے۔اگر یہ 6.5  ہو یا اس سے زیادہ ہو تو بھی ذیابیطس کی تشخیص کی جاسکتی ہے۔ اگر خالی پیٹ خون میں شوگر  100 سے زیادہ ہو مگر 126 سے کم ہو یا دن میں کبھی بھی 140 سے زیادہ ہو مگر 200 سے کم ہوتو ایسی صورت میں ایک ٹیسٹ کروایا جاتا ہے جسے گلوکوز ٹولرنس ٹیسٹ کہتےہیں۔ اس میں خالی پیٹ انسان کو 75 گرام گلوکوز کھلا کر وقفے وقفے سے خون میں شوگر ٹیسٹ کی جاتی ہے۔ اگر اس ٹیسٹ میں خون میں شوگر 200 یا زیادہ نکل آئے تو ذیابیطس کی تشخیص کردی جاتی ہے۔ بعض لوگوں میں شوگرنہ تو نارمل ہوتی ہے اور نہ اتنی زیادہ کہ ذیابیطس تشخیص کی جا سکے۔  اس کو ذیابیطس کی ابتدا سمجھنی چاہئے اور ایسے لوگوں کو خوراک اور ورزش سے اپنا وزن کم کرنا چاہئے۔
نوٹ : ملی گرام فی ڈیسی لیٹر شوگر کو اگر 18 سے تقسیم کردیں تو ملی مول فی لیٹر اور ملی مول فی لیٹر کو 18سے  ضرب دیں تو ملی گرام کا پتہ چلے گا۔

6

بانجھ پن یا بچہ پیدا نہ ہونے کے مسئلے کو سمجھنے کیلیئے حمل ٹھہرنے کے بنیادی نظام کو سمجھنا ضروری ہے۔

اس لڑی میں ہم ایک تصویر کی مدد سے اس نظام کو سمجھنے کی کوشش کرتے ہیں

مرد کے جسم میں لاکھوں کی تعداد میں مردانہ جرثومے تشکیل پاتے ہیں۔

عورت کے اندر رحم یا بچہ دانی کے قریب دو بیضہ دانیاں ہوتی ہیں جن میں سے کسی ایک میں ایک ماہ میں عموماً صرف ایک زنانہ جرثومہ یا انڈا بنتا ہے

عورت اور مرد کے ملاپ کے وقت مردانہ جرثومہ بچہ دانی میں پہنچ کر فیلوپین ٹیوب کی طرف سفر شروع کر دیتا ہے

عورت کی بیضہ دانی میں بننے والا انڈا فیلوپین ٹیوب میں داخل ہو کر بچہ دانی کی طرف چلنا شروع کر دیتا ہے

عورت کے جسم میں انڈا ایک ماہ میں صرف ایک بار بنتا ہے اور عموماً یہ دن مہینے کے وسط میں ہوتا ہے اگر عورت کے نظام کا مہینہ ۲۸ دن کا ہو

اگر عورت کے نظام میں دنوں کی ترتیب درست نہ ہو تو انڈا بننے کا دن آخری دن سے ۲ ہفتے پہلے سمجھا جاتا ہے

یہ انڈا تقریباً تین دن تک زندہ رہتا ہے اور اگر اس دوران اس کا مردانہ جرثومے سے ملاپ نہ ہو پائے تو یہ ختم ہو جاتا ہے۔

ملاپ کی صورت میں مخلوط خلیہ رحم کی اندرونی دیوار سے چپک جاتا ہے اور یوں بچے کی تشکیل کا عمل شروع ہو جاتا ہے جو تقریباً ۹ ماہ میں مکمل ہوتا ہے۔

7

شادی شدہ جوڑوں میں اولاد نہ ہونا ایک عام مسئلہ ہے۔ بدقسمتی سے اس بارے میں عوام کو درست معلومات مہیا کرنے کا کوئی تسلی بخش انتظام نہیں۔
ہم کوشش کریں گے کہ اس لڑی میں اس مسئلے کے اہم پہلووں کو اجاگر کر سکیں۔
بنیادی طور پر اولاد نہ ہونی کی تین قسم کی وجوہات ہو سکتی ہیں۔

مرد سے متعلقہ وجوہات

عورت سے متعلقہ وجوہات

عورت اور مرد کی باہمی مطابقط کے مسائل


مردانہ مسائل

مردانہ جرثوموں یا خلیوں کی تعداد میں کمی

مردانہ چرثوموں کی تعداد تو درست ہو لیکن اُن کی ساخت میں خرابی ہو

مردانہ جنسی قابلیت میں کمی


عورت کے مسائل

فیلوپین ٹیوب کا راستہ بند ہونا

رحم یا بچہ دانی کی بیماری کی وجہ سے اس میں مخلوط خلیہ جڑنے میں ناکامی

عورت کے جسم میں کچھ دیگر بیماریاں بھی مسائل پیدا کر سکتی ہیں


عورت اور مرد کی باہمی مطابقط کے مسائل

بعض اوقات انفرادی طور پر مرد اور عورت میں تو کوئی مسئلہ نہیں ہوتا البتہ عورت کی بچہ دانی مردانہ خلیے کو قبول کرنے سے انکار کرتی ہے کیونکہ اس کا دفاعی نظام مردانہ خلیے کے خلاف عمل میں آ جاتا ہے۔



8
The Outdoor Patients Department of the Punjab Institute of Cardiology provides free medicine to the needy patients, but after using these medicines, a number of patients from various localities started pouring into city’s hospitals with complaints of bleeding from nose, ears and other body parts.

Punjab government on Monday sealed a factory providing medicines to the Punjab Institute of Cardiology.

According to the report of drug testing laboratory, Mega factory’s medicine naming ‘Cardiowason’ was found substandard because at the time of purchase medicine was perfectly alright but spots has been started appearing with the passage of time.

Cardiowason was given to cardiac patients for lowering the cholesterol in the body.

9
General Health & Disease Articles / Dengue Information in Urdu
« on: November 07, 2011, 10:38:56 PM »
ڈینگی پھیلانے والے مچھر ایڈیز ایجپٹی کے بارے میں عمومی معلومات



ڈینگی بخار ایک وائرس سے ہوتا ہے جس
کو پھیلانے کا کام ایڈیز ایجِپٹی نسل کی مادہ مچھر کرتی ہے۔
یہ مچھر جراثیم کو بیمار انسان سے صحت مند انسان کے جسم میں منتقل کرتا ہے۔
اس مچھر کی زندگی ایک ماہ سے کم ہوتی ہے لیکن اس کے انڈے خشک حالت میں ایک سال سے زیادہ عرصہ تک زندہ رہ سکتے ہیں اور بیمار مادہ مچھر سے ڈینگی کا وائرس انڈوں میں منتقل ہو جاتا ہے۔
یہ مچھر عموماً صاف پانی کے چھوٹے ذخیروں جیسے پانے کے کھلے برتن، گملے، پرانے جوتوں یا ٹائروں، پلاسٹک یا ٹین کے پرانے ڈبوں، درخت کے تنے کے ساتھ سوراخوں، پانے سے بھرے زمین کے چھوٹے گڑھوں، دریائوں اور نالوں کے ساتھ پانی کے چھوٹے گڑھوں۔ پانی کی ٹینکیوں اور پانی کی ایسی اور کئی چھوٹی بڑی رکاوٹوں میں پلتا بڑھتا ہے۔ اس مچھر کی افزائشِ نسل خصوصاً برسات کے دنوں میں ہوتی ہے۔
یہ مچھر انسانی رہائش سے ۱۰۰ میٹر کے دائرے میں رہنا پسند کرتا ہے۔
یہ مچھر دن کو اوقات میں کاٹتا ہے خصوصاً صبح اور سرِ شام۔
یہ مچھر بھوں بھوں کی آواز نہیں کرتا بلکہ خاموشی سے شکار کھیلتا ہے اور عموماً پشت سے یا پائوں کی طرف سے حملہ آور ہوتا ہے۔
اس مچھر کے حملے کا علم عموماً کاٹنے کی تکلیف سے ہوتا ہے اور جس وقت انسان کو اس کے کاٹنے کا پتہ چلتا ہے تو اس وقت یہ اپنا کام کر کے انسانی جسم سے کچھ دور محوِ پرواز ہوتا ہے۔
یہ مچھر کپڑوں کے اوپر سے بھی انسان کو کاٹ لیتا ہے۔
اس مچھر کا خاتمہ ڈینگی بخار پر قابو پانے کے سلسلے کی ایک اہم کڑی ہے۔
اس مچھر کو ختم کرنے کے لیئے اس کی پیدائش کی جگہوں یعنی پانے کے چھوٹے ذخیروں کو گھروں کے آس پاس سے ختم کرنا ہو گا۔
کچھ تحقیقات کے مظابق ایک بیکٹیریا اس نسل کے مچھر میں اگر پھیلا دیا جائے تو اس میں ڈینگی کے وائرس کی پرورش رک جاتی ہے۔ اسی طرح جینیٹک انجینیرنگ کے ذریعے بھی اس مچھر میں کچھ تبدیلیاں لا کر اس کی افزائشِ نسل کو روکنے میں کچھ پیش رفت ہوئی ہے۔ تازہ پانی کا ایک چھوٹا جاندار اس مچھر کے لاروے کھا کر اس کی افزائشِ نسل روکنے کا باعث بنتا ہے  ۔


10
ملیریا کی عمومی معلومات
ملیریا کا مرض ایک جراثیم پلازموڈیم سے ہوتا ہے جس کی چار قسمیں ہیں۔
اس جراثیم کو بیمار انسان سے صحت مند انسان کے جسم میں انوفیلیز نسل کی مادہ مچھر پہنچاتی ہے۔
یہ مچھر عموماً گندے اور کھڑے بانی کی سطح پر انڈے دے کر اپنی نسل بڑھاتا ہے۔
یہ مچھر عموماً رات کو کاٹتا ہے۔

ملیریا کی علامات
ملیریا میں عموماً وقفے وقفے سے تیز بخار ہوتا۔
مریض کو بخار کے ساتھ سردی اور کپکپی بھی لگتی ہے۔
سر میں شدید درد بھی ہو سکتا ہے۔
متلی کی کیفیت اور قے بھی ہو سکتی ہے۔

مرض سے بچائو کے طریقے
مچھر کے خاتمے کے لیئے گھروں کے ارد گرد سے کھڑے پانی کو ختم کریں۔
پانی کی نکاسی کے نظام کو درست بنائیں۔
نالیوں یا کھڑے پانی کے اُن ذخیروں کو کہ جن کو ختم نہ کیا جا سکے اُن پر مچھر مار دوا یا مٹی کے تیل کا چھڑکائو کریں۔
گھروں میں مچھر مار دوا کا سپرے کریں۔
گھر کے تمام دروازوں اور کھڑکیوں کی جالیوں کی مرمت کروائیں۔
گھر سے باہر نکلتے وقت جسم کے کھلے حصوں پر مچھر بھگانے والا تیل لگا کر رکھیں خصوصاً شام کے وقت۔

تشخیص اور علاج
اگر مریض میں اوپر دی گئی علامات پائی جائیں تو ڈاکٹر سے رجوع کریں ۔
اس مرض کی تشخیص طبی معائینے اور خوں میں ملیریے کے جراثیم دیکھ کر کی جاتی ہے۔
اس مرض کا علاج کونین کلوروکوئین یا چند اور دوائیوں سے کیا جاتا ہے۔

11
ٹائیفائڈ کی عمومی معلومات
ٹائیفائڈ کا مرض ایک جراثیم بیکٹیریا سالمونیلا سے ہوتا ہے جس کی چارعام  قسمیں ہیں۔
یہ جراثیم بیمار انسان سے صحت مند انسان کے جسم میں خوراک کے ذریعے پہنچتا ہے۔
اس جراثیم کا اخراج مریض کے پاخانے میں ہوتا ہے اور عموماً مکھیاں اس کو انسانی خوراک تک پہنچاتی ہیں یا سیوریج کی نالیاں اگر کسی جگہ لیک ہوں اور وہ پانی قریبی پینے کے پانی والی نالیوں میں پنہچ جائے تو جراثیم پینے کے پانی میں پہنچ جاتا ہے۔
بازار میں بکنے والی کھانے کی وہ اشیا جن کو کُھلا رکھا جائے اور ان پر مکھیاں بیٹھیں وہ بھی اس جراثیم کے پھیلانے کا باعث بنتی ہیں۔
یہ مرض عموماً گرمیوں میں زیادہ ہوتا ہے جب مکھیوں کی افزائشَ نسل زیادہ ہوتی ہے۔


ٹائیفائڈ کی علامات
ملیریا میں عموماً  تیز بخار ہوتا ہے جس کی شدت آہستہ آہستہ بڑھتی ہے۔۔
مریض کو بخار کے ساتھ کمزوری محسوس ہوتی ہے اور جسم میں دکھن ہوتی ہے۔
متلی کی کیفیت اور قے بھی ہو سکتی ہے۔
بعض اوقات مریض کا پیٹ بھی خراب ہو سکتا ہے۔


مرض سے بچائو کے طریقے
مکھیوں کی افزائشِ نسل کے مواقع ختم کریں۔
سیوریج کی نکاسی کے نظام کو درست بنائیں۔
بازار کی کھلی اشیا کھانے سے اجتناب کریں۔
گھروں میں مکھی مار دوا کا سپرے کریں۔
گھر کے تمام دروازوں اور کھڑکیوں کی جالیوں کی مرمت کروائیں۔
کھانے کی تمام اشیا کو ڈھانپ کر رکھیں۔
کھلی جگہوں میں رفعِ حاجت سے پرہیز کریں۔


تشخیص اور علاج
اگر مریض میں اوپر دی گئی علامات پائی جائیں تو ڈاکٹر سے رجوع کریں ۔
اس مرض کی تشخیص طبی معائینے اور خوں میں جراثیم کے خلاف اینٹی باڈیز دیکھ کر کی جاتی ہے۔
جراثیم کا کلچر ٹیسٹ بھی معاون ہو سکتا ہے۔
اس مرض کا علاج  چند مخصوص اینٹی بائیوٹک دوائیوں سے کیا جاتا ہے۔
بروقت درست تشخیص اور علاج نہایت اہم ہیں وگرنہ مرض میں کئی پیچیدگیاں بھی پیدا ہو سکتی ہیں جن میں آنتوں کا پھٹنا بھی شامل ہے۔
مرض کا علاج بخار ٹوٹنے کے بعد بھی کچھ دن مزید جاری رہنا لازم ہے وگرنہ مرض دوبارہ لوٹ کر آ سکتا ہے۔ اس سلسلے میں اپنے ڈاکٹر کی ہدایات پر مکمل عمل کیجیئے۔
مرض کے دوران اور اس کے بعد بھی کچھ دنوں تک مریض کو زیادہ آرام کی ضرورت ہوتی ہے۔
مریض کو تونائی بخش خوراک جس میں یخنی ، کھچڑی ، دلیہ ، ابلے ہوئے آلو ، تلے ہوئے چپس ، نوڈلز ، پھل یا پھلوں کے رس ، گلوکوز ، دال ، لوبیا ، پلائو ، قیمہ وغیرہ دیئے جاسکتے ہیں ۔ شدید بیماری کے دوران ایسی خوراک جو معدے پر بوجھ ڈالنے کا باعث بنے جیسے نان ، بھنا ہوا گوشت ، پکوڑے وغیرہ ، ان سے پرہیز کریں۔

12
ذیابیطس کی عمومی معلومات
ذیابیطس کا مرض انسانی جسم میں ایک کیمیکل انسولین کی مقدار یا اثر پذیری میں کمی واقع ہونے سے ہوتا ہے۔ 
انسولین انسانی جسم میں گلوکوز کی مقدار کو کنٹرول کرتی ہے اور اس کی کمی میں گلوکوز کی مقدار بڑھ جاتی ہے۔
ذیابیطس کی دو قسمیں ہیں۔
ٹائپ ۱ ذیابیطس عموماً کم عمری میں ہوتا ہے اور بچوں میں بھی ہو سکتا ہے۔ اس میں انسولین بنانے والے خلیے جو کہ لبلبے میں پائے جاتے ہیں دھیرے دھیرے اپنا کام کرنا چھوڑ دیتے ہیں۔ نتیجَتاً انسولین کی مقدار کم ہوتی جاتی ہے اور گلوکوز کی مقدار بڑھتی جاتی ہے۔
ٹائپ ۲ ذیابیطس عموماً بڑی عمر کے لوگوں میں ہوتا ہے اور اس میں انسولین کی کمی نہیں ہوتی بلکہ انسولین اپنا کام کرنا چھوڑ جاتی ہے اور خون میں گلوکوز کی مقدار بڑھ جاتی ہے۔
یہ بات خصوصاً یاد رکھنے کے قابل ہے کہ ذیابیطس کا مرض صرف خون میں گلوکوز کی زیادتی تک ہی محدود نہیں رہتا بلکہ اس میں دھیرے دھیرے جسم کے کئی اعضا متاثر ہوتے چلے جاتے ہیں۔ ان اعضا کے متاثر ہونے کی بنیادی وجہ زیابیطس کا خون کی باریک نالیوں پر حملہ ہے۔
ذیابیطس کے مرض سے متاثر ہونے والے اعضا میں گردے ، دل ، آنکھیں اور اعصاب خاص طور پر شامل ہیں ۔
 

ذیابیطس کی علامات
پیشاب کا بار بار آنا
مریض کو زیادہ بھوک اور پیاس لگنا
مریض کا وزن گرنا
تھکاوٹ رہنا
زخموں کا دیر سے مندمل ہونا۔
 

ذیابیطس میں احتیاطی تدابیر اور پرہیز

ذیابیطس کے مرض میں پرہیز خصوصی اہمیت رکھتی ہے بلکہ یہ علاج کا اہم ترین حصہ ہے۔
خوراک میں درجِ ذیل اشیا کا استعمال کم سے کم کریں
میٹھی اشیا مثلاً ، مٹھائی ، ٹافیاں ،  چاکلیٹ ، چینی ، بسکٹ ، کیک وغیرہ
تلی ہوئی اشیا ، مکھن اور گھی
کچی سبزی اور سلاد وغیرہ کا زیادہ سے زیادہ استعمال مفید رہتا ہے۔
ورزش کی کثرت بھی ذیابیطس میں بہت مفید ہے۔

تشخیص اور علاج

پیشاب میں گلوکوز یا شوگر کی موجودگی
خون میں گلوکوز کی زیادہ مقدار
(ایک صحت مند انسان کے خون میں گلوکوز کی زیادہ سے زیادہ حد خالی پیٹ حالت میں ۱۰۰ گرام فی ڈیسی لیٹر جبکہ کھانے کے ۲ گھنٹے بعد ۱۸۰ گرام فی ڈیسی لیٹر ہے۔
ذیابیظس کے ابتدائی اور کم شدت کے درجوں میں پرہیز ہی اکثر اوقات مکمل علاج کا کام کرتی ہے لیکن اگر پرہیز کام نہ کرے یا مرض شدید نوعیت کا ہو تو ڈاکٹر کے مشورہ سے ادویات شروع کرنا لازم ہے۔
ٹائپ۱ ذیابیطس میں علاج انسولین سے کیا جاتا ہے جبکہ ٹائپ ۲ ذیابیطس میں عموماً شوگر کی مقدار کم کرنے والی کچھ گولیاں دی جاتی ہیں۔

13
GOVERNMENT OF THE PUNJAB
HEALTH DEPRTMENT


6th October 2011
NOTIFICATION

No. S.O. (PH) 9-98 / 2002 (P-I).   

Signed by

SECRETARY
GOVERNMENT OF THE PUNJAB
HEALTH DEPARTMENT


http://pportal.punjab.gov.pk/portal/docimages/29531dengue_fever.doc

15
General Health & Disease Articles / Is Dengue Fever Fear Justified?
« on: October 11, 2011, 10:39:30 PM »
Keeping in mind all the hype regarding dengue fever created by media question arises should one really be afraid of dengue fever?

I will first like to refer to my practice experience these days. In my observation this fear has grasped general public to such an extent that they attribute most of their symptoms to dengue fever. Yes this fear is increasing the patient reporting to the clinics for those minor ailments for which in ordinary circumstances they do not seek medical advice.

Dengue fever in its initial phases may be very tricky to diagnose. Clinically it may mimic several of the common infectious disorders so a general empirical approach is usually to be followed.

The lab diagnosis is also not very helpful in initial cases though there may be fall in WBCs and platelet counts. ALT may rise and specific immunologic markers of dengue usually become positive after the first week.

Warning for Future!

Nowadays the dengue mostly follows a benign course. We ought to be more concerned about our future. It is likely that any one who gets one of the 4 dengue subtypes now, if he next encounters any of the other subtypes of dengue subsequently, may end up with dengue hemorrhagic fever or dengue shock syndrome  which have high morbidity and mortality associated.

So what to do?

1. identify and eliminate aedes egyptii mosquito.
2. activate a community participation drive to eradicate the mosquito from the locality.
3. Put pressure on govt at all level to seriously eradicate the mosquito and just do not only resort to media gimmicks.

For the time being the danger is going dormant due to the commencing winter and resultant hibernation of mosquitoes but remember folks it is going to come back soon. May be around march 2012 in a much lethal form.

Pages: [1] 2